aahat si koi aaye to lagta hai ke tum ho, romantic urdu poetry

Lehraaye sada aankh mein piyaare tera aanchal


Lehraaye sada aankh mein piyaare tera aanchal,
Jhoomar hai tera chaand sitaare tera aanchal, 
 Lipte kabhi shaano pe kabhi zulf se khele, 
Kiyon dhoondta rehta hai sahaare tera aanchal, 
Ab tak meri yaadon mein hai rangon ka talatum, 
Dekha tha kabhi jheel kinare tera aanchal, 
Mehkein teri khushboo se dehakti huwi saansein, 
Jab taiz hawa khud se utaare tera aanchal, 
 Aanchal mein rache rang nikharein teri zulfein, 
Uljhi huwi zulfon ko sanwaare tera aanchal, 
Mohsin Naqvi

mahi and lubna

آنے والا انقلاب آیا نہیں


آنے والا انقلاب آیا نہیں
کیا کوئی اہل کتاب آیا نہیں

اسم اعظم بھی پڑھا ہے بار بار
غار سے لیکن جواب آیا نہیں

ہو رہا ہے کچھ نہ کچھ زیر زمیں
کونپلیں پھوٹیں گلاب آیا نہیں

رات بھر پھر ہجر کا موسم رہا
جس کو آنا تھا وہ خواب آیا نہیں

خشک لب لوٹے ہیں کیوں صحرا نورد
راستے میں کیا سراب آیا نہیں

مجھ کو اک چشمک تھی سیل اشک سے
اس لیے میں زیر آب آیا نہیں

اب بھلا چھوڑ کے گھر کیا کرتے




اب بھلا چھوڑ کے گھر کیا کرتے
شام کے وقت سفر کیا کرتے
تیری مصروفیتیں جانتے ہیں
اپنے آنے کی خبر کیا کرتے
جب ستارے ہی نہیں مل پائے
لے کے ہم شمس و قمر کیا کرتے
وہ مسافر ہی کھلی دھوپ کا تھا
سائے پھیلا کے شجر کیا کرتے
خاک ہی اول و آخر ٹھہری
کر کے ذرے کو گہر کیا کرتے
رائے پہلے سے بنا لی تو نے
دل میں اب ہم ترے گھر کیا کرتے
عشق نے سارے سلیقے بخشے
حسن سے کسب ہنر کیا کرتے