Friday, 20 January 2017

Jub tu meri dharkan meri bato se aenya tha


Tere faraq k lamhe shumar karte hain


Teri jabeen pe likha tha k tu bhula dega


Us k Hatho se khoshbo e hina aati hogi



Dheeray Se Sarakti Hai Raat Us Ke Aanchal Ki Tarah



Dheeray Se Sarakti Hai Raat Us Ke Aanchal Ki Tarah

Poet: Wasi Shah


Dheeray Se Sarakti Hai Raat Us Ke Aanchal Ki Tarah
Uska Chehra Nazar Aata Hai Jheel Main Kanwal Ki Tarah

Baad Muddat Usko Daikha To Jism-o-Jaan Ko Yun Laga
Pyasi Zameen Pe Jaisay Koi Baras Gaya Baadal Ki Tarah

Roz Kehta Hai Seenay Pe Sar Rakh K Raat Bhar Jaga’uon Ga,
Sar-e-Sham Hee Mujhe Aaj Phir Sula Gaya Wo Kal Ki Tarah,

Mere Hee Dil Ka Makeen Nikla Wo Shakhs “Wasi”
Aur Mein Shehar Bhar Me Dhundta Raha Usy Kisi Pagal Ki Tarah

Kisi Ki Aankh Se Sapne Chura Kar Kuch Nahi Milta Poet: Wasi Shah

Kisi Ki Aankh Se Sapne Chura Kar Kuch Nahi Milta

Poet: Wasi Shah

Kisi Ki Aankh Se Sapne Chura Kar Kuch Nahi Milta
Munderon Se Chiraghon Ko Bojha Kar Kuch Nahi Milta

Hamari Soch Ki Parwaz Ko Roke Nahi Koi
Nae Aflaq Pe Pehrey Bitha Kar Kuch Nahi Milata

Koi Ek Aadh Sapna Ho To Phir Acha Bhi Lagta Hai
Hazaro Khawab Aankhon Mein Saja Kar Kuch Nahi Milta

Sakon Un Ko Nahi Milta Kabhi Pardes Ja Kar Bhi
Jinhen Apne Watan Se Dil Laga Kar Kuch Nahi Milta

Use Kehna Ke Palkon Per Na Tanke Khawbon Ki Jhalar
Samandar Ke Kinare Ghar Bana Ker Kuch Nahi Milta

Ye Acha Hai Ke Aapas Ke Bharam Na Tootane Paien
Kabhi Bhi Doston Ko Azamaa Kar Kuch Nahi Milta

Na Jane Koun Se Jazabe Ki Yon Taskeen Karta Hon
Bazahir To Tumhare Khat Jala Kar Kuch Nahi Milta

Faqat Tum Se Hi Karta Hon Main Sari Raaz Ki Batain
Har Ek Ko Dastan-E-Dil Suna Kar Kuch Nahi Milta

Amal Ki Sokhti Rag Mein Zara Sa Khoon Shamil Kar
Mare Hamdam Faqat Baten Bana Kar Kuch Nahi Milta

Use Main Pyar Karta Hon To Mujh Ko Chain Ata Hai
Wo Kehata Hai Use Mujh Ko Sata Kar Kuch Nahi Milta

Mujhe Aksar Sitaron Se Yahi Awaaz Aati Hai
Kisi Ke Hijr Mein Nendein Ganwaa Kar Kuch Nahi Milta

Jigar Ho Jaye Ga Chalni Ye Ankhein Khoon Roen Gi
Wasi Be-Faiz Logon Se Nibha Kar Kuch Nahi Milta


Wednesday, 11 January 2017

Jab Raat Ki Nagin Dasti Hai


Jab Raat Ki Nagin Dasti Hai


Jab Raat Ki Nagin Dasti Hai
Nus Nus Mein Zehar Utarta Hai

Jab Chand Ki Kirnein Tezi Se
Uss Dil Ko Cheer Ke Ati Hain

Jab Ankh Ke Andar Hi Ansoo
Zanjeron Mein Bandh Jate Hain

Sab Jazbon Pe Cha Jate Hain
Tab Yaad Bohat Tum Aate Ho

Jab Dard Ki Jhan-Jar Bajti Hai
Jab Raqs Ghamon Ka Hota Hai

Khawabon Ki Taal Pe Sare Dukh
Wehshat Ke Saaz Bajate Hain

Gate Hain Khawahish Ki Ley Me
Masti Me Jhomte Jate Hain

Sab Jazbon Par Cha Jate Hain
Tab Yaad Bohat Tum At
Wasi Shah

Hazaron Dukh Paren Sehnaa


Hazaron Dukh Paren Sehnaa

Image result for images of wasi shah

Hazaron Dukh Paren Sehna Mohabbat Mar Nahi Sakti
Hai Tum Se Bus Yahe Kehna Mohabbat Mar Nahi Sakti

Tera Har Bar Mere Khat Ko Parhna Aur Ro Dena
Mera Har Bar Likh Dena Mohabbat Mar Nahi Sakti

Kiya Tha Hum Ne Campus Ki Nadi Par Ek Haseen Wada
Bhaly Hum Ko Parhy Marna Mohabbat Mar Nahi Sakti

Jahan Mein Jab Talak Panchi Chahaktey Urhtey Phirty Hain
Hai Jab Tak Phool Ka Khilna Mohabbat Mar Nahi Sakti

Purane Ah-Had Ko Jab Zinda Karne Ka Khayal Aey
Mujhe Bus Itna Likh Dena Mohabbat Mar Nahi Sakti

Wo Tera Hijar Ki Shab Main Fone Rakhany Se Zara Pehley
Bahat Rotey Huwe Kehna Mohabbat Mar Nahi Sakti

Agar Hum Has-Raton Ki Qabar Mein He Dafan Ho Jaen
To Yeh Qatbon Pe Likh Dena Mohabbat Mar Nahi Sakti

Purane Rabton Ko Phir Nae Waade Ki Khawahish Hai
Zara Aik Baar To Kehna Mohabbat Mar Nahi Sakti

Gae Lamhat Fursat Ke Kahan Se Dhoond Kar Laon
Wo Pehron Hath Par Likhna Mohabbat Mar Nahi Saktia

Poet: Wasi Shah

اداس راتوں میں تیز کافی کی تلخیوں میں


اداس راتوں میں تیز کافی کی تلخیوں میں

Image result for images of wasi shah
اداس راتوں میں تیز کافی کی تلخیوں میں
وہ کچھ زیادہ ہی یاد آتا ہے سردیوں میں

مجھے اجازت نہیں ہے اس کو پکارنے کی
جو گونجتا ہے لہو میں سینے کی دھڑکنوں میں

وہ بچپنا جو اداس راہوں میں کھو گیا تھا
میں ڈھونڈتا ہوں اسے تمہاری شرارتوں میں

اسے دلاسے تو دے رہا ہوں مگر یہ سچ ہے
کہیں کوئی خوف بڑھ رہا ہے تسلیوں میں

تم اپنی پوروں سے جانے کیا لکھ گئے تھے جاناں
چراغ روشن ہیں اب بھی میری ہتھیلیوں میں

جو تو نہیں ہے تو یہ مکمل نہ ہو سکیں گی
تری یہی اہمیت ہے میری کہانیوں میں

مجھے یقیں ہے وہ تھام لے گا بھرم رکھے گا
یہ مان ہے تو دیے جلائے ہیں آندھیوں میں

ہر ایک موسم میں روشنی سی بکھیرتے ہیں
تمہارے غم کے چراغ میری اداسیوں میں

وصی شاہ 


آنکھوں میں چبھ گئیں تری یادوں کی کرچیاں


آنکھوں میں چبھ گئیں تری یادوں کی کرچیاں

Image result for images of wasi shah

آنکھوں میں چبھ گئیں تری یادوں کی کرچیاں
کاندھوں پہ غم کی شال ہے اور چاند رات ہے

دل توڑ کے خموش نظاروں کا کیا ملا
شبنم کا یہ سوال ہے اور چاند رات ہے

کیمپس کی نہر پر ہے ترا ہاتھ ہاتھ میں
موسم بھی لا زوال ہے اور چاند رات ہے

ہر اک کلی نے اوڑھ لیا ماتمی لباس
ہر پھول پر ملال ہے اور چاند رات ہے

چھلکا سا پڑ رہا ہے وصیؔ وحشتوں کا رنگ
ہر چیز پہ زوال ہے اور چاند رات ہے

وصی شاہ 

تم مری آنکھ کے تیور نہ بھلا پاؤگے


تم مری آنکھ کے تیور نہ بھلا پاؤگے



تم مری آنکھ کے تیور نہ بھلا پاؤگے
ان کہی بات کو سمجھوگے تو یاد آؤں گا

ہم نے خوشیوں کی طرح دکھ بھی اکٹھے دیکھے
صفحۂ زیست کو پلٹو گے تو یاد آؤں گا

اس جدائی میں تم اندر سے بکھر جاؤگے
کسی معذور کو دیکھوگے تو یاد آؤں گا

اسی انداز میں ہوتے تھے مخاطب مجھ سے
خط کسی اور کو لکھو گے تو یاد آؤں گا

میری خوشبو تمہیں کھولے گی گلابوں کی طرح
تم اگر خود سے نہ بولو گے تو یاد آؤں گا

آج تو محفل یاراں پہ ہو مغرور بہت
جب کبھی ٹوٹ کے بکھرو گے تو یاد آؤں گا

وصی شاہ 

Wednesday, 4 January 2017

کتنی زلفیں کتنے آنچل اڑے چاند کو کیا خبر

کتنی زلفیں کتنے آنچل اڑے چاند کو کیا خبر

کتنا ماتم ہوا کتنے آنسو بہے چاند کو کیا خبر

مدتوں اس کی خواہش سے چلتے رہے ہاتھ آتا نہیں

چاہ میں اس کی پیروں میں ہیں آبلے چاند کو کیا خبر

وہ جو نکلا نہیں تو بھٹکتے رہے ہیں مسافر کئی

اور لٹتے رہے ہیں کئی قافلے چاند کو کیا خبر


اس کو دعویٰ بہت میٹھے پن کا وصیؔ چاندنی سے کہو

اس کی کرنوں سے کتنے ہی گھر جل گئے چاند کو کیا خبر

Wasi Shah Poetry

تو میں بھی خوش ہوں کوئی اس سے جا کے کہہ دینا


تو میں بھی خوش ہوں کوئی اس سے جا کے کہہ دینا
اگر وہ خوش ہے مجھے بے قرار کرتے ہوئے

تمہیں خبر ہی نہیں ہے کہ کوئی ٹوٹ گیا
محبتوں کو بہت پائیدار کرتے ہوئے

میں مسکراتا ہوا آئینے میں ابھروں گا
وہ رو پڑے گی اچانک سنگھار کرتے ہوئے

مجھے خبر تھی کہ اب لوٹ کر نہ آؤں گا
سو تجھ کو یاد کیا دل پہ وار کرتے ہوئے

یہ کہہ رہی تھی سمندر نہیں یہ آنکھیں ہیں
میں ان میں ڈوب گیا اعتبار کرتے ہوئے

بھنور جو مجھ میں پڑے ہیں وہ میں ہی جانتا ہوں
تمہارے ہجر کے دریا کو پار کرتے ہوئے

Poet Wasi Shah



ڈسنے لگے ہیں خواب مگر کس سے بولئے


ڈسنے لگے ہیں خواب مگر کس سے بولئے
میں جانتی تھی پال رہی ہوں سنپولیے

بس یہ ہوا کہ اس نے تکلف سے بات کی
اور ہم نے روتے روتے دوپٹے بھگو لیے

پلکوں پہ کچی نیندوں کا رس پھیلتا ہو جب
ایسے میں آنکھ دھوپ کے رخ کیسے کھولیے

تیری برہنہ پائی کے دکھ بانٹتے ہوئے
ہم نے خود اپنے پاؤں میں کانٹے چبھو لیے

میں تیرا نام لے کے تذبذب میں پڑ گئی
سب لوگ اپنے اپنے عزیزوں کو رو لیے

خوش بو کہیں نہ جائے پہ اصرار ہے بہت
اور یہ بھی آرزو کہ ذرا زلف کھولیے

تصویر جب نئی ہے نیا کینوس بھی ہے
پھر طشتری میں رنگ پرانے نہ گھولیے

Dasne lage khuwab magar kis se boliye
Main janti thi pal rahi hn sanpoliye

اور سب بھول گئے حرف صداقت لکھنا


اور سب بھول گئے حرف صداقت لکھنا
رہ گیا کام ہمارا ہی بغاوت لکھنا

لاکھ کہتے رہیں ظلمت کو نہ ظلمت لکھنا
ہم نے سیکھا نہیں پیارے بہ اجازت لکھنا

نہ صلے کی نہ ستائش کی تمنا ہم کو
حق میں لوگوں کے ہماری تو ہے عادت لکھنا

ہم نے جو بھول کے بھی شہ کا قصیدہ نہ لکھا
شاید آیا اسی خوبی کی بدولت لکھنا

اس سے بڑھ کر مری تحسین بھلا کیا ہوگی
پڑھ کے ناخوش ہیں مرا صاحب ثروت لکھنا

دہر کے غم سے ہوا ربط تو ہم بھول گئے
سرو قامت کو جوانی کو قیامت لکھنا

کچھ بھی کہتے ہیں کہیں شہ کے مصاحب جالبؔ
رنگ رکھنا یہی اپنا اسی صورت لکھنا

Monday, 2 January 2017

Muhabbato k hasin fasano ki bat mat karo


Mujhe tum bohat yad aate ho


Es k andaze guftogo main


Yad karte hain qasmen khate hain


Main wo nhi jo dil lagi ko dil se laga logi


Wo aankhen teri wo muskurahat teri


Ab tu shayad he mjhse muhabbat kare koe


سلگتی شاخ سے خوشبو کو مہکانا نہیں اچھا


سلگتی شاخ سے خوشبو کو مہکانا نہیں اچھا
اگر خود بھی تڑپتے ہو تو تڑپانا نہیں اچھا

یہاں پستہ قدوں کی بھیڑ ہے لیکن ذرا ٹھہرو
قدو قامت کا نظروں میں یہ پیمانہ نہیں اچھا

خوشی کا ایک لمحہ بھی کئی صدیوں پہ بھاری ہے
مگر تیرا یہاں سے روٹھ کر جانا نہیں اچھا

سروں پہ دھوپ رہتی ہےسدا سایہ ہی دیتے ہیں
یہاں اشجار کی راہوں میں ویرانہ نہیں اچھا

فسردہ شہر میں ہر آدمی خوفِ وبا میں ہے
کسی کی بے بسی پہ اتنا مسکانا نہیں اچھا

یقیں کی حد میں رہ کر ہی خدا کے آدمی ہیں ہم
زمیں کے عشق میں جنت کو ٹھکرانا نہیں اچھا

نگاہوں میں اداسی ہے لبوں پہ گہری خاموشی 
سکوتِ ذات کو اتنا بھی تڑپانا نہیں اچھا

چلے جانے پہ اس کے رو رہی ہوں آج لاحاصل 
غموں کو دل کی وادی میں یوں ٹھہرانا نہیں اچھا

اگر ترکِ تعلق میں یہ دنیا چھوڑ دی وشمہ
میں اتنا جانتی ہوں اب پلٹ آنا نہیں اچھا

Sunday, 1 January 2017

دیدہ و دل میں کوئی حسن بکھرتا ہی رہا

Perveen Shakir

دیدہ و دل میں کوئی حسن بکھرتا ہی رہا
لاکھ پردوں میں چھپا کوئی سنورتا ہی رہا

روشنی کم نہ ہوئی وقت کے طوفانوں میں
دل کے دریا میں کوئی چاند اترتا ہی رہا

راستے بھر کوئی آہٹ تھی کہ آتی ہی رہی
کوئی سایہ مرے بازو سے گزرتا ہی رہا

مٹ گیا پر تری بانہوں نے سمیٹا نہ مجھے
شہر در شہر میں گلیوں میں بکھرتا ہی رہا

لمحہ لمحہ رہے آنکھوں میں اندھیرے لیکن
کوئی سورج مرے سینے میں ابھرتا ہی رہا

میں اپنی دوستی کو شہر میں رسواء نہیں کرتی

Perveen Shakir
میں اپنی دوستی کو شہر میں رسواء نہیں کرتی 
محبت میں بھی کرتی ہوں مگر چرچا نہیں کرتی

جو مجھ سے ملنے آ جائے میں اس کی دِل سے خادم ہوں
جو اٹھ کے جانا چاھے میں اسے روکا نہیں کرتی

جسے میں چھوڑ دیتی ہوں اسے پِھر بھول جاتی بوں
پِھر اس ہستی کی جانب میں کبھی دیکھا نبیں کرتی

تیرا اصرار سر آنكھوں پہ کے تم کو بھول جاؤں میں
میں کوشش کر کے دیکھوں گی مگر وعدہ نہیں کرتی

Perveen Shakir

کچھ تو ہوا بھی سرد تھی کچھ تھا تیرا خیال بھی

Perveen Shakir
کچھ تو ہوا بھی سرد تھی کچھ تھا تیرا خیال بھی 
دِل کو خوشی كے ساتھ ساتھ ہوتا رہا ملال بھی 

سب سے نظر بچہ كے وہ مجھ کو کچھ ایسا دیکھتا 
اک دافع تو رک گئی گردش ماہ سال بھی 

دِل تو چمک سکے گا کیا پِھر بھی تراش كے دیکھ لیں 
شیشہ گراں شہر كے ہاتھ کا یہ کمال بھی 

اس کو نا پا سکے تھے جب دِل کا عجیب حال تھا 
اب جو پلٹ كے دیکھیے بات ہی کچھ مُحال تھی 

میری طلب تھا ایک شخص وہ جو نہیں ملا تو پِھر 
ہاتھ دعا سے یوں گرے بھول گیا سوال بھی 

اس کی سخن طرازیاں میرے لیے بھی ڈھال تھیں 
اس کی ہنسی میں چھپ گیا اپنے غموں کا حال بھی 

شام کی ناسمجھ ہوا پوچھ رہی ہے ایک پتہ 
موج ہوا کیوں یار ، کر کچھ تو میرا خیال بھی

Kuch Toh Hawa Bhi Sard Thi, Kuch Tha Tera Khayal Bhi
Dil Ko Khushi Ke Sath Sath Hota Raha Malal Bhi

Baat Woh Aadhi Raat Ki, Raat Woh Pore Chand Ki
Chand Bhi Woh Aen Cheet Ka, Us Per Tera Jamal Bhi

Sab Se Nazar Bacha Ke Woh Mujh Ko Kuch Aesy Dekhta
Ek Dafa Toh Ruk Gai Gardish Mah-Wa-Sal Bhi

Dil Tu Chamak Sake Ga Kya, Pher Bhi Tursh Ke Dekh Le
Shisha Giran-E-Shehar Ke Hath Ka Yeh Kamal Bhi

Us Ko Na Pa Sake They Jab Dil Ka Ajeb Halt Ha
Ab Jo Palat Ke Dekhiye, Baat Thi Kuch Muhal Bhi

Perveen Shakir

ڈسنے لگے ہیں خواب مگر کس سے بولئے

Perveen Shakir

ڈسنے لگے ہیں خواب مگر کس سے بولئے
میں جانتی تھی پال رہی ہوں سنپولیے

بس یہ ہوا کہ اس نے تکلف سے بات کی
اور ہم نے روتے روتے دوپٹے بھگو لیے

پلکوں پہ کچی نیندوں کا رس پھیلتا ہو جب
ایسے میں آنکھ دھوپ کے رخ کیسے کھولیے

تیری برہنہ پائی کے دکھ بانٹتے ہوئے
ہم نے خود اپنے پاؤں میں کانٹے چبھو لیے

میں تیرا نام لے کے تذبذب میں پڑ گئی
سب لوگ اپنے اپنے عزیزوں کو رو لیے

خوش بو کہیں نہ جائے پہ اصرار ہے بہت
اور یہ بھی آرزو کہ ذرا زلف کھولیے

تصویر جب نئی ہے نیا کینوس بھی ہے
پھر طشتری میں رنگ پرانے نہ گھولیے

وہ ہم نہیں جنہیں سہنا یہ جبر آ جاتا Perveen Shakir

Perveen Shakir

وہ ہم نہیں جنہیں سہنا یہ جبر آ جاتا
تری جدائی میں کس طرح صبر آ جاتا

فصیلیں توڑ نہ دیتے جو اب کے اہل قفس
تو اور طرح کا اعلان جبر آ جاتا

وہ فاصلہ تھا دعا اور مستجابی میں
کہ دھوپ مانگنے جاتے تو ابر آ جاتا

وہ مجھ کو چھوڑ کے جس آدمی کے پاس گیا
برابری کا بھی ہوتا تو صبر آ جاتا

وزیر و شاہ بھی خس خانوں سے نکل آتے
اگر گمان میں انگار قبر آ جاتا

Perveen Shakir Ghazal

اک ہنر تھا کمال تھا کیا تھا

Perveen Shakir

اک ہنر تھا کمال تھا کیا تھا
مجھ میں تیرا جمال تھا کیا تھا

تیرے جانے پہ اب کے کچھ نہ کہا
دل میں ڈر تھا ملال تھا کیا تھا

برق نے مجھ کو کر دیا روشن
تیرا عکس جلال تھا کیا تھا

ہم تک آیا تو بہر لطف و کرم
تیرا وقت زوال تھا کیا تھا

جس نے تہہ سے مجھے اچھال دیا
ڈوبنے کا خیال تھا کیا تھا

جس پہ دل سارے عہد بھول گیا
بھولنے کا سوال تھا کیا تھا

تتلیاں تھے ہم اور قضا کے پاس
سرخ پھولوں کا جال تھا کیا تھ

Huner tha kama tha kia tha
mujh main tera jamal tha kia
Perveen shair

اس شرط پہ کھیلوں گی پیا پیار کی بازی

اس شرط پہ کھیلوں گی پیا پیار کی بازی 
جیتوں تو تجھے پاؤں، ہاروں تو پیا تیری

Is shart peh khelon gi pia pyar ki bazi
jeton tu tujhy pahon, haron tu pia teri

Perveen shakir

Perveen Shakir

اچانک دل ربا موسم کا دل آزار ہو جانا


اچانک دل ربا موسم کا دل آزار ہو جانا
دعا آساں نہیں رہنا سخن دشوار ہو جانا

تمہیں دیکھیں نگاہیں اور تم کو ہی نہیں دیکھیں
محبت کے سبھی رشتوں کا یوں نادار ہو جانا

ابھی تو بے نیازی میں تخاطب کی سی خوشبو تھی
ہمیں اچھا لگا تھا درد کا دل دار ہو جانا

اگر سچ اتنا ظالم ہے تو ہم سے جھوٹ ہی بولو
ہمیں آتا ہے پت جھڑ کے دنوں گل بار ہو جانا

ابھی کچھ ان کہے الفاظ بھی ہیں کنج مژگاں میں
اگر تم اس طرف آؤ صبا رفتار ہو جانا

ہوا تو ہم سفر ٹھہری سمجھ میں کس طرح آئے
ہواؤں کا ہماری راہ میں دیوار ہو جانا

ابھی تو سلسلہ اپنا زمیں سے آسماں تک تھا
ابھی دیکھا تھا راتوں کا سحر آثار ہو جانا

ہمارے شہر کے لوگوں کا اب احوال اتنا ہے
کبھی اخبار پڑھ لینا کبھی اخبار ہو جانا

poet Ada Jafri